Very Sad Poetry In Urdu 2 lines - Sad Poetry in Urdu About Love

ExtremelyUnhappy Poetry In Urdu 2 words- Touching Verse in Urdu Of Love

Sad poetry in Urdu 2 lines is two lines of poetry that you are looking for. Sad Shayari in Urdu for-hearted people who are badly hearted in love and live. Sad poetry with images for you to fulfill your desire.

Mujhay bhi is Ishqq nay yun tora fir marora aur khi ka nhi chora samundar kay ain beech laa kay chora chornay ko ham nay bhi bht kucch chora magar usnay joh hamain chora fir meri zindagi mein kabhi bhi khushi nay moonh nahi mora!G haan khushi nay moonh nahi mora kiyon kay meray meh


boob nay hi mera dill tora fir mujhy tora aur fir mujhy Khushi khushi choraaa!

toota dill liye phirtay ho kaho toh main bhi apnay dill ki surat haal dikhao


Mujhay na btaye koi Ishqq karnay k tareeqay mujhy toh bhula diye is Ishqq nay zindagi jeenay kay saleeqay Awara pagal deewana yehi boltay hai yeh aab e zam zam say nahaye huway Log Akhir Yeh Kiyon Nahi samjhtay hamaray aqeeday !



Beshumaar hasratain nahi paali sahib meri aik hasrat nay hi Mujhay kissi hasrat k qabil nahi chora mujhay aik shaks ki hi chahat nay beshumaar jhinjhora aur mein thehra ashiq banjaara mujhay kiyon iss ishqq nay youn tora k kissi k bhi qabil nahi choraaa!


muhabbat milyy to neend be apninaa rahe faraz

ghum naam zindagi thei to kitna sakoon thaa.


humm say naa pochea rastaa ayy gar kay

humm musafir hay zindagi bhar kay








بےقصور بھی تھے اس کی محبت کے وفادار بھی تھے پھر کیوں

یار بھی روٹھا ساتھ بھی چھوٹا اور دل بھی ٹوٹا





‏جیسے تجدید ِ تعلق کی بھی رُت ہو کوئی،

زخم بھرتے ہیں تو غمخوار بھی آ جاتے ہیں! 



ظلم کرتی ہیں تیری یادیں مجھ پر قسم سے

سوجاؤ تو ُاٹھا دیتی ہیں جاگ جاؤ تو ُرولا دیتی ہیں



صرف وقت گزارنا ہو تو کسی اور کو اپنا لینا 

ہم پیار اور دوستی عبادت کی طرح کرتے ہیں



تیرے کس کس خیال کو دل سے جدا کروں

میرے ہر خیال میں تیرا ہی خیال رہتا ہے



وہ بھی اپنے نہ ہوے دل بھی گیا ہاتھوں سے

ایسے آنے سے تو بہتر تھا نہ آنا دل کا



تمنا وہ تمنا ہے جو دل کی دل میں رہ جائے 

جو مر کر بھی نہ پوری ہو اسے ارمان کہتے ہیں



اہم کردار ہوں قصے کا مگر باغی ہوں

زِد پہ آؤں تو کہانی سے نکل جاتا ہوں



جس صبح کی تقدیر میں لکھی ہو جدائی

اس صبح سے پہلے کوئی مر جائے تو اچھا

ساحر لدھیانوی




اے ظالم مت کر انکار میرے پاس آنے سے

خدا بھی روٹھ جاتا ہے کسی کا دل دکھانے سے




میری بِے چیَنِی مِرے عِشق کُو بَربَاد نَہ کَردِے

پَھڑپھَڑاتا بَھی نہَیں ھُوں کِہ کہیں وُہ آَزاد نَہ کَردِے


ور تم میری دسترس میں تھے ہی کب جاناں؟

اک خوش فہمی تھی بس خوش فہمی ہی رہی



لوگ واقف ہیں ہماری عادتوں سے

رُتبہ کم ہی سہی لاجواب رکھتے ہیں..

جو لوگ اجالوں میں کھو جائیں،،،!

وہ طاق راتوں میں بھی نہیں ملتے



کسی نے چھوڑ جانا ہو, تو پھر چھوڑ جاتا ہے

بچھڑنا ہو تو صدیوں کی رفاقت کچھ نہیں ہوتی.



تعلق ٹوٹ جائے تو, سفینے ڈوب جاتے ہیں

یہ سب کہنے کی باتیں ہیں, حقیقت کچھ نہیں ہوتی


جسے محرومیاں ملی ہوں, وہی جان سکتا ہے

زبانی حوصلہ, جھوٹی مروت کچھ نہیں ہوتی.



خدا نوازے تمہیں مجھ سے بھی بہتر

پر خدا کرے اب تُو میرے لئے ترسے



وائے قسمت کہ نہ راس آئی مُحبت ہم کو

ہائے تقدیر کہ وہ بھی نہ ہمارے نکلے


جیتے جی ہم نہ ہلے اپنے ٹھکانے سے نصیر !

اُن کے کُوچے سے جنازے ہی ہمارے نکلے



اُداس دیکھنا تو تصویر کھینچ لینا دُوست

اُسے رسید بھی دینی ہے ، ہجر کی میں ن


دِل کو مِلتا ہے جو تیری دِید کے بعد،

فساد سارا اُسی سکُون کا ہے!



میں رو رو کے کہنے لگا درد دل

وہ منہ پھیر کر مسکرانے لگا


بےقصور بھی تھے اس کی محبت کے وفادار بھی تھے

پھر کیوں

یار بھی روٹھا ساتھ بھی چھوٹا اور دل بھی ٹوٹا



عجیب رشتہ رہا کچھ اس طرح اپنوں سے

نہ نفرتوں کی وجہ ملی نہ محبتوں کا صلہ ملا



زندگی میں بھی مسافر ہوں تیری کشتی کا

تو جس روز مجھ سے کہے گی میں اتر جاؤں گا


ریزہ ریزہ کر کے بیکھیر دیتی ہے

بے پرواہ لوگوں سے بے پناہ محبت



کہاں جا رہے ہو چھوڑ کے مجھے

رک جاؤ تھوڑی دیر اکٹھے چلتے ہیں


ہم اس اُمید سے ہیں محوِ سفر صدیوں سے

کہ راستے میں تیرا گھر کبھی تو آئے گا



‏تیرے ساتھ کا مطلب جو بھی تھا

تیرے بعد کا مطلب کچھ بھی نہیں


‏کچھ نفرتوں کی نظر ہوا میرا وجود

باقی جو بچ گیا تھا محبت میں مر گیا




فـقـط درد کی زنجـیر بدلی جا رہی تهی

میں سمجها تها رہائی ہوگئی ہـے



Nazar andaz krtay ho Teri qasam nazar ana chor day gay

Ghar Kay sonay may ek tasweer hm wo tasweer kiyaa aina hi Tor daingay

Or reg na jaye teri muhabbat ka ek qatra b meray seenay Mai

Nikalay gay dil bahir pr neechor daingay




ظالماں ظلم تو باز آجا

کرنا ظلم تے مینوں پیار نہ کر




Muhabbat libaas nhii jo roz badla jaye

Muhabbat kafan hm pehn kr utara nhii jata




Tum orna b chaho to ohr ni po gy

Jni

Ham tum Ben or tum ham b udary rah jain gy....

Ya chahto ki basti ha

Yahn aka lota ni kerty



Rakhte hain talluq tu nibhate hain Umar bhar!!

Hum se badla nh jata yar bhi or pyar bhi!!


Muhbt jisko ho drd wohi janta h....

Wrna koi or nhi janta k dil kitna laholuhan h..


کوئی چھوڑ جائے اس بات کی پرواہ نہیں ھوتی

ارے ہر کوئی وفا بھی تو نہیں کر سکتا



اُس کی آنکھیں بُلا رہی تھی

اور وہ کہہ رہا تھا کہ چلے جاؤ



اک شام اور ڈھل گئی

 ایک دن اور جی لیا تیرے بغیر


آپس میں ھم درد بدلتے رھتے ھیں

اُس کا سر اور میرا سینہ دُکھتا ھے۔


ان سے بچھڑ کر کچھ یوں وقت گزرا 

کبھی زندگی کو ترسے کبھی موت کو پکارا





وہ مجھے بار بار دیتا ہے پرندوں کی مثال

صاف کیوں نہیں کہتا میرا شہر چھوڑ دو


اسکے چہرے کو تو نے ٹھیک سے دیکھا ہی نئیں

پانچ جھیلـــوں کے برابر تو فقط آنکھیـــــں ہیں.


ور کچھ بھی نہیں مانگا میرے مالک تجھ سے

اس کی گلیوں میں پڑی خاک بنا دے مجھ کو



جو ہم پہ گزرے تھے رنج سارے!!!

جو خود پہ گزرے تو لوگ سمجھے!!!

جب اپنی اپنی محبتوں کے!!!

عذاب جھیلے تو لوگ سمجھے!!!

وہ جن درختوں کی چھاؤں میں سے!!!

مسافروں کو اٹھا دیا تھا

انہی درختوں سے اگلے موسم

جو پھل نہ اترے تو لوگ سمجھے!!!

وہ اک کچی سی عمر والی لڑکی کے!!!

فلسفے کو کوئی نہ سمجھا

جب اس کے کمرے سے لاش نکلی

خطوط نکلے تو لوگ سمجھے!!!

وہ گاؤں کا ضعیف العمر!!!

سڑک کے بننے پہ کیوں خفا تھا

جب اُس کے بچے جو شہر جا کر

کبھی نہ لوٹے تو لوگ سمجھے!!!



کبھی خوش ہوئے تو، لکھیں گے ۔

کہ کیوں طبیعت اداس رہتی ہے ۔۔


تیری آنکھوں نے ایسا درد پھونکا تھا مجھ پر

سزائیں بھول گیا ہوں سب قیامت کی




آ بیٹھ جا میری عدت میں

تیرے لیئے مر گیا ہوں میں





کسی سے مانگ کر لینی پڑے جو.

ایسی مُحبت کا دُکھ سمجھتے ہو


کہیں میں ختم نہ کر لوں سفر یہ ازیت کا ۔۔

کہیں میں پھینک نا دوں آج مار کر خود کو 



میرا درد صرف میرا خدا جانتا ھے

تم نے تو بس میری هنسی دیکھی ھے



Jab izhary muhabat kr bethy ham un sy 

To wo apny hi kisi gham ko ly kr bethy thy




جن سے دل  جُڑ جائیں 

اُن کے بغیر دل  نہیں لگتا 





ہیں اُداسی کے اور بھی اسباب

مُجھ کو تیرا ملال تھوڑی ہے




حال مت پوچھو زندگی کا ہم سے 

 حالت اس قدر غمگین ہے کہ عمر جینے کی ہے اور شوق مرنے کا 


جس نظروں سے نظرانداز کرتے ہو

انہی نظروں سے ڈھونڈتے رہ جاؤ گے



 

کسی کو کھو دیا مسکرا کر

.کسی کے واسطےبہت روئے ہم



قہقہ دیکھ کے میرا فقیر نے کہا

صدقہ دیا کرو اپنی اداسی کا



اے زندگی ہمیں توڑ کر ایسے بکھیرو اب کی بار

نہ خود کو جوڑ پائیں ہم نہ پھر سے توڑ پائیں وہ


کبھی توڑا کبھی جوڑا کبھی پھر توڑ کر

 جوڑا ناکارہ کر دیا دل کو تیری پیوند کاری نے





Dil mohaly main ek basti thi

Ab wo veeran ho gai ho gi




‏تم کسی شخص کے اندر کی حقیقت کو کبھی نہیں جان سکتے 

تم کو کیا خبر یہ مسکرانے والے خدا

.کے روبرو کتنا روتے ہیں 




قابلِ رحم ہے حالت میری

.دیکھنے آؤ رُلا دوں تم کو



میرا دل ‏مُحبّت سے زیادہ عزت کو پسند کرتا ہے



یونہی اس کی آنکھیں نہیں درویشوں جیسی

اس نے من میں ایک فقیر سنبھال رکھا ہے




Ajj Agar Tho Roya Tho Qasam Se Cheer Donga Aye Dill

Na Wo Rahegi Tujh Main Na Tho Rahega Mujh Main


ہمارے بعد نہ آئے گا, اُسے چاہت میں ایسا سکون

وہ زمانے سے کہتا پھرے گا مجھے چاہو اُس پاگل کی طرح




میں محبت بانٹنے والی شوخ و چنچل شہزادی

دل دکھ بھی جائے تو مسکرا کے ٹال دیتی ہوں





امید نہ کر اس دنیا میں کسی سے ہمدردی کی

بڑے پیار سے زخم دیتے ہیں شدت سے چاہنے والے




غمِ دوجہاں سے کہہ دو کہیں اور جا کے ٹھہرے

مِرا دل تو بھـــر چُکا ہے غمِ یار سہتے سہتے




کچھ اس طرح سے لوٹا ہے شہر تمنا نے مجھے

زندگی چھین بھی لی جان سے مارا بھی نہیں




اداس ہںونٹوں پہ مسکراہٹ کے پھول آئیں

تو جان لینا

کہ دل کے اندر کی کچھ اداسی بہت اداسی

میں ڈھل رہی ہے




پوچھتے ہيں لوگ مجھ سے كيوں خاموش رہتے ہو اب اتنے

كيسے كہوں ان سے كے درد اب لفظوں ميں بياں نہيں ہوتے

written by: Áffãń 

         




کبھی آپ بھی پوچھیے حال ہمارا

کبھی ہم بھی کہیں دعا ہے آپ کی


kabhhi ap be pocheye haal hamara!!!

kabhi haam be kahe dua hai ap ke






شب ڈھلی چاند بھی نکلے تو سہی

درد جو دل میں ہے چمکے تو سہی




اُس کی نفرت بھی محبت ہو گی

میرے بارے میں وہ سوچے تو سہی


دل اُسی وقت سنبھل جائے گا

دل کا احوال وہ پوچھے تو سہی


اُس کے قدموں میں بچھا دوں آنکھیں

میری بستی سے وہ گزرے تو سہی


میرا جسم آئینہ خانہ ٹھہرے

میری جانب کبھی دیکھے تو سہی








shab dhali chand be nikle to sahi

dard jo  dil me hai chamke to sahi


us ke nafrat  be muhabbat  hogi

mere bari  me wo soche to sahi


dil use wakth sambhal jayega

dil  ka ahwal wo pochte to sahi


us ke qadmo me bicha  doon ankheen

mere basti se wo guzre to  sahi


mera jism aina khana tehre  

mere janib kabhi dekhte to sahi











Even if the loose moon came out at night

The pain that is in the heart is shining


He also hates love

Even if they think about me


The heart will be restored immediately

The heart cover, if they ask


Fold eyes in his footsteps

Even if they passed through my town


My body stayed in the mirror

If ever you look at me





































جانے دو صاحــــــــــب اتنے شکوے

لگتا ہے محبت نہیں احسان کرتے ہو




Let's go so much sir

It seems love does not favor





jane do sahib itne shaikwai

laghta hai muhabbat nahi ihsan karte hoo












jab be zikr hota hai  sukoon ka

wohi tere bahooon ke talaab laag jati hai





جب بھی ذکر ہوتا ہے سکون کا

وہی تیری بانہوں کی طلب لگ جاتی ہے
















اس سے بچھڑے تو مر جائیں گے 

کمال کا وہم تھا بخار تک نہ ہوا




us se bichre to  mar jayenge 

kamal ka wehm tha to bukhar tak na howa























Mana k anmol ho tum kasratyy nayaab be hoo 


par hum be WO log han Jo haar dahlezz pa nhi milte.













تم جو بچھڑے ہـو جَلدبازی میں

یار تم رُوٹھ بھی تو سکـتےتھے



tum to bichare ho jald bazzi me


yar tum  rooth be to sakhte thei



















ہم نے تو پوری زندگی لگا دی اس کو خوش کرنے میں

اس نے ایک پل مے سب کچھ چین لیا




ham ne to pori zindagi laga dei us ko khush karne mein

us ne aik pal me sab kuch cheen lia




















چاندنی رات کے خاموش ستاروں کی قسم 

دل میں اب تیرے سوا کوی بھی اباد نہیں 



chandni raat kai khamosh sitaron ke qasam

dil me ab tere siwa koi be abad nahi


Iklan Atas Artikel

Iklan Tengah Artikel 1

Iklan Tengah Artikel 2

Iklan Bawah Artikel