2 Line Poetry In Urdu - best urdu shayari (urdu amazing poetry)



جھمکے کا مقدر ہے قابل رشک بہت

تیرے گال کے پہلو میں بہک رہا ہے 





 Tumari Yaad Ki Barsaat Jab Barasti Ha

Ma Toot Jata Hu Kachay Sy Jhonpry Ki Tara




میں بھی بہت عجیب ہوں اتنا عجیب ہوں کہ بس
خود کو تباہ کر لیا اور ملال بھی نہیں




Mohabat Karne Walon Ki Tajarat Bhi Anokhi Hai,
Manafa Chor Dete Hain Khasaray Baant Lete Hain.

محبت کرنے کی تجارت بھی انوکھی ہے
منافع چھوڑ دیتے ہیں خسارے بانٹ لیتے ہیں

فیض احمد فیض






Yaqeen Na Aye Tu Ik Bar Poch Kar Dekho,
Jo Hans Raha Hai, Wo Zakhmo Se Chor Nikle Ga.

یقین نہ آۓ تو اِک بار پوچھ کر دیکھ لو
جو ہنس رہا ہے۔ وہ زخم سے چور نکلے گا





Nabeel Aayen-e Ishq Main Bhi To Ik Tarmeem Honi Chahye,
Khel Ke Dil Torne Ki Nahi Morne Ki Reet Honi Chahye.

نبیل عینِ عشق میں بھی اِک ترامیم ہونی چاہیے
کھیل کے دل توڑنے کی نہیں موڑنے کی ریت ہونی چاہیے

——————-





Jo Kaha Mein Ne Keh Payar Aata Hai Mujh Ko Tum Par,
Hans Ke Kehne Laga Aur Aap Ko Aata Kya Hai.

جو کہا میں نے کہ پیار آتا ہے مجھ کو تم پر
ہنس کے کہنے لگا اور آپ کو آتا کیا ہے





Tu Bhi Ae Shakhs Kahan Tak Mujhe Bardasht Karey,
Bar Bar Aik Hi Chehra Nahi Dekha Jata.

تو بھی اے شخص کہاں تک مجھے برداشت کرے
بار بار ایک ہی چہرہ نہیں دیکھا جاتا

——————-



Ye Rim Jhim, Ye Barish, Ye Aawargi Ka Mosam,
Hamare Bas Mein Hota Tere Pass Chale Aate.

یہ رم جھم یہ آوارگی کا موسم
ہمارے بس میں ہوتا تیرے پاس چلے آتے

——————-




Cherr Dekho Meri Maiyat Pay Jo Aaye To Kaha,
Tum Wafadaron Mein Ho Ya Mein Wafadaron Mein Hon.

چھیڑ دیکھو میری میت پہ جو آۓ تو کہا
تم وفاداروں میں ہو یا میں وفاداروں میں ہوں

——————-






Ab to Khawhish Hai Ye Ke Saza Wo Milay,
Roye Jaon To Chup Na Krayae Koi.

اب تو خواہش ہے یہ کہ سزا وہ ملے
روۓ جاؤں تو چپ نہ کراۓ کوئی

——————-





Ye Maktab Ka Parha Sab Hi Bhula Deti Hai,
Zindagi Apne Sabaq Khud Hi Sakha Deti Hai.

یہ مکتب کا پڑھا سب ہی بھلا دیتی ہوں
زندگی اپنا سبق خود ہی سکھا دیتی ہے

——————-




Dunya Ne Tajurbaat O Hwadis Ki Shakal Mein
Jo Kuch Muje Diya Hai Wo Luta Raha Hun Mein



Kis ko khabar thi, kis ko yaqeen tha ke aesy bhi din ayen gey

Jeena bhi mushkil ho ga aur marnay bhi na payen gey


Iklan Atas Artikel

Iklan Tengah Artikel 1

Iklan Tengah Artikel 2

Iklan Bawah Artikel